مشہور شخصیات کے آخری الفاظ

اس دنیا نے بہت سے عظیم انسان پیداکیے جو آج ظاہر ی طور پر ہمارے درمیان موجود نہیں ہیں۔لیکن ان کی خو شبودار اور صلاحیتوں کی وجہ سے وہ آج بھی لوگوں کے دلوں میں زندہ ہیں۔ آج کا موضوع ان مشہور شخصیات کے م و ت سے پہلے کہے گئے آخری الفاظ۔ سب سے پہلے نبی کریم ﷺ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے بیان کیا ہے کہ حضرت محمد ﷺ کی زبان مبارک سے جو آخر ی الفاظ نکلے وہ یہی “اللھم رفیق الا علی” کے الفاظ تھے۔ یعنی اے اللہ! مجھے رفیق اعلیٰ میں شامل فرما۔

بانی پاکستا ن قائد اعظم علی جناحؒ کے آخر ی الفاظ ۔ قائداعظم علی جناحؒ کے پروفیسر ڈاکٹر الہی بخش نے اپنی کتا ب ” ود دی ڈیورنگ ڈیز قائد اعظم “تحریر کیا ہے کہ بانی پاکستان کے آخری الفاظ جو انہوں نے م ر ن ے سے پہلے کہے تھے یہ تھے “کہ میں اب نہیں ہوں ۔۔” جس کے آدھے گھنٹے بعد ان کا ان ت ق ا ل ہوگیا ہے۔ ان کے بعد لیاقت علی خان ۔ پاکستان کے پہلے لیاقت علی خان سو لہ اکتوبر انیس سو اکیاون کو راول پنڈی میں ایک جلسے کے دوران شہید کردیا گیا تھا۔

اور مختلف رپورٹس کے مطابق ان کے آخر ی الفاظ یہ تھے ” کہ اللہ پاکستا ن کی حفاظت کرے “۔ ذوالفقار علی بھٹو ۔اخبار کی رپورٹس کے مطابق ذوالفقار علی بھٹو سے پ ھ ان سی سے قبل وسعیت تحر یر کرنے کے حوالے سے پوچھا گیا تھا۔ جس پر انہوں نے دھیمی آوا ز میں یہ جوا ب دیا تھا ” کہ میں نے کوشش تو کی تھی۔ مگر خیالات بہت زیادہ منتشر تھے، اس لیے ایسا نہیں کرسکے”۔

ان الفاظ کے بعد پ ھ ان سی گھاٹ تک خاموش رہے۔ چرچل سابق برطانوی وزیر اعظم ۔ ونسٹن لیونارڈ دوسری جنگ عظیم کے دوران برطانیہ کے وزیراعظم تھے ۔ ان کو اپنے ملک کا ہیرو سمجھا جاتا ہے۔ ان کے آخری الفاظ یہ تھے “میں اب ان سے بیزار ہوچکا ہوں”۔ ان کے بعد سٹیوجوبز جو ایپل کمپنی کے شریک بانی تھے ۔ سٹیو جوبز کا نام کسی لیے غیر معروف نہیں ہے۔ خاص طور پر آئی فون اور آئی پیڈ استعمال کرنے والوں کے لیے ۔

کینسر کی بیماری کے باعث چھپن سال کی عمر میں ان ت ق ا ل کرنے والے ان کے آخری الفاظ یہ تھے ۔ وہ حیرانی کسی کیفیت سے “واو ، واو،واو” پکارتے رہے۔ سابق صدر صدام حسین ۔عراق پر دو دہائیوں سے زائد عرصے تک حکمرانی کرنے والے سخت گیر عامر صدا م حسین کے آخر ی الفاظ۔ جوکلمی طیبہ تھے جو انہوں نے پ ھ ان سی سے قبل پڑھے تھے۔ مگر مکمل نہ کرسکے ۔ جو پڑھا تھا وہ یہ تھے ۔ “میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور محمدؐ “بس یہی تھے۔ اس کے بعد باری ہے ہیگو شاویز جو کہ وینزویلا کے صدر تھے۔ ہیگو شاویز جو کہ انیس سو ننانوے سے اپنی م و ت یعنی دو ہزار تیرہ تک وینزویلا کے صدر رہے۔ اور ان کے آخری الفاظ یہ تھے۔ “میں م ر ن ا نہیں چاہتا پلیز مجھے م ر ن ے سے بچالو”۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *